Home EPaper Urdu EPaper Hindi Urdu Daily News National Uttar Pradesh Special Report Editorial Muharram Entertainment Health Support Avadhnama

یہ جو آج ہے وہی کل بھی تھا

ads

برادر محترم طارق غازی کا ایک چھوٹا سا مضمون، جو گزشتہ ہفتے سوشل میڈیا پر ہم نے پڑھا جو برادر عزیز سلمان غازی نے ہمیں بھیجا تھا ، اس لائق ہے کہ پرنٹ میڈیا میں بھی محفوظ ہو جائے ۔وہ لکھتے ہیں :
دنیا میں دو طرح کے لوگ ہوتے ہیں ۔ایک وہ جو بادلوں کا رنگ دیکھ کر بتاتے ہیں کہ ان میں بارش کے قطرے ہیں یا برف کے ریزے یا کالی آندھی کے جھکڑ ۔اور دوسرے وہ جو بارش دیکھ کر کہتے ہیں کہ ۔۔لو بارش ہورہی ہے ،برف پڑتی ہے تو کہتے ہیں کہ برف باری شروع ہو چکی ہے اور آندھی چلتی ہے تو فرماتے ہیں، ارے یہ تو آندھی ہے !
چند لوگ سعودی عرب میں قیام کے دوران ہی کبھی زیر لب کبھی کتابوں میں ملفوف اور کبھی بر ملا ان باتوں کی نشاندہی کر رہے تھے جو آج اظہر من ا لشمس ہیں تو اس وقت کیا اپنے اور کیا بیگانے سب انہیں دیوانہ اور سعودی حکمرانوں کو اسلام کا واحد پشتی بان سمجھنے پر مصر تھے !
دسمبر ۱۹۹۱ میں الجزائرمیں فوجی صدر شاذلی بن جدید نے الکشن کروائے جس کے پہلےہی مرحلے میں عباس مدنی کی پارٹی ’الجیرین سالویشن فرنٹ کو بھاری اکثریت ملی اور قرائن نے بتایا کہ دوسرے مرحلے کے اب یہی پارٹی حکومت بنائے گی ۔اس الکشن کو کا لعدم کروانے میں شاہ فہد کا ہاتھ تھا لیکن اعلان اس کا فرانس سے کروایا گیا تھا ۔الجیرین سالویشن فرنٹ کو بلا تاخیر ’دہشت گرد ‘ قرار دے کر الکشن کے لیے نا اہل قرار دے دیا گیا ! جب فرانس پر جمہوریت دشمنی کا الزام لگا تو اس نے یہ کہہ کر اپنی جان چھڑائی کہ ہم نے تو سعودی حکومت کے دباؤ میں ایسا کیا تھا ۔اس کے بعد وہاں قائم نئی فوجی حکومت کو سب سے پہلے سعودی عرب ہی نے تسلیم کیا تھا ۔اور دس لاکھ الجزائری اس سعودی ایڈونچر کی نذر ہو گئے تھے ۔جس طرح آج سیریا(اور یمن ) میں ہو رہا ہے ! مگر ان الجزائری مسلمانوں کی موت پر وہ ماتم نہیں ہوا جو شامیوں کے قتل عام پر ہورہا ہے ( رہے یمن کے مسلمان تو وہ ایسے ’کافر ہیں جنہیں بحیثیت انسان بھی زندہ رہنے کا حق دینے کو’ شام کے نوحہ کناں ‘تیار نہیں !)
سوڈان کے جنوب میں تیل نکل آیا تو تو وہاں کے عیسائیوں اور بت پرستوں حمایت کر کے سعودیوں نے با لآخر سوڈان کو(اہل ایمان کے دائمی دشمنوں کی مدد سے ) دو حصوں میں تقسیم کروادیا اور جنوبی سوڈان کا تیل ’’تیلیوں ‘‘ کے ہاتھ لگا اور اس خطہ ارض کے انسانوں کو ’اَز راہِ ترحُّم ‘قحط ،بھوک ،افلاس کی دولت عطا کی گئی ۔ظاہر ہے کہ سوڈان کے اسلام پسندوں کو بھی یہی سزا ملی جن کے سربراہ ایک با عمل عالم دیناور اوکسفورڈ کے تعلیم یافتہ شیخ حسن ترابی مرحوم تھے !
صومالیہ میں ۱۹۹۱ میں فوجی ڈکٹیٹر کی بر طرفی کے بعد خانہ جنگی کی وبا پھیلی جو ( مغربی ایشیا کے کچھ مسلم ملکوں کی طرح )آج تک جاری ہے ۔اس ملک کی بربادی کے پیچھے ،دیکھنے والوں کی آنکھوں سے، سعودی ہاتھ چھپا ہوا نہیں تھا! خانہ جنگی کے دوران سعودی اور امریکی حکومتیں مالی اور حربی مدد کے ساتھ (حسب دستور،شام و عراق او ریمن و افغانستان کی طرح ) متحارب گروہوں کی سر پرستی فرماتی رہیں!
عراق میں ۲۰۰۲ میں امریکی فوج کشی سے تقریباً دس سال کی جنگ شروع ہوئی ۔(جارح )امریکی فوجوں کا سب سے بڑا مستقر(اسرائل نہیں ) سعودی عرب تھا عراق پر ہونے والے سبھی حملے الخرج کی کمیں گاہ سے کیے جا تے رہے جس میں چھے لاکھ عراقی فوجی اور شہری جاں بحق ہوئے ۔اس سے پہلے برسوں کی معاشی ناکہ بندی کے نتیجے میں پانچ لاکھ نو زائیدہ بچے زندگی بخش دواؤں کی عدم دستیابی کی وجہ سے اسپتالوں میں مر گئے ۔ اس جنگ کی سرمایہ کاری بھی سعودی ہی کر رہے تھے ۔شام کی رواں جنگ بھی سعودی شہ پر( داعش ہی کی بدولت ) شروع ہوئی تھی۔یمن میں راست فوج کشی خود سعودیوں ہی نے کی تھی۔۔ جس میں اب تک لاکھوں یمنی مسلمان موت کے گھاٹ اتارے جا چکے ہیں (لیکن چونکہ اس کے ذمہ دار سعودی ہیں اسلئے شام کے ماتم داروں کو نظر نہیں آتے )!
(بد نصیبی سے ) اس داستان کا سب سے زیادہ دلچسپ(و دل خراش) پہلو یہ ہے کہ یہ ساری جنگیں مسلمانوں کے خلاف ( مسلمانوں ہی کے ذریعے ) ہوئی ہیں !
ان خادمان حرم کی زبانیں کبھی نہ کھلیں جب گجرات میں قتل عام ہوا ( بلکہ اس کے ذمہ دار کو سعودی عرب کے سب سے بڑے شہری اعزاز سے نوازا گیا !)جب سری لنکا میں ہزاروں مسلمانوں کومارا اور گیا اور جب میانمار میں لاکھوں مسلمانوں کو اجاڑا گیا اور نسل کشی کی گئی (تو بھی سعودی حکمرانوں کی زبانیں گنگ رہیں )۔
اس وقت دنیائے اسلام میں کسی کو یاد نہ آیا کہ ایک صدی پہلے ان ہی خادمان اسلام کے اجداد نے ترکوں کو کافر قرار دیا تھا ( جو شیعہ بھی نہیں تھے ) اور ان کے خلاف برطانیہ کی حمایت کی تھی ۔آج ان ہی خادمان حرم کے خفیہ اور اب علانیہ تعلقات اسرائل کے ساتھ کل بھی تھے اور آج بھی ہیں !
یہ سب قصے اور کہانیاں ہیں ! اب بادل نہیں آندھیاں ہیں تو اب یہ کہنا لاحاصل ہے کہ ’ارے یہ تو آندھی چل رہی ہے ۔ ۔جب آندھی چل رہی ہو اور آدمی صحرا میں ہو تو وہ ٹھیک سے منھ بھی نہیں چھپا سکتا !‘‘

ads

Leave a Comment

ads

You may like

Hot Videos
ads
In the news
post-image
Marquee Slider Special Report World

हांगकांग में ज़बरदस्त विरोध प्रदर्शन- चीन विरोधी आंदोलन के 6 माह पूरे | जनता ने विशाल रैली निकाली

हांगकांग : हांगकांग में लोकतंत्र के समर्थन में हो रहे प्रदर्शन के 6 महीने पूरे होने के अवसर पर रविवार को बड़ी संख्या में लोगों ने विशाल रैली निकाल...
post-image
Marquee Muslim World Slider Special Report World

आयतुल्लाह सीस्तानी और मरजईयत के समर्थन में इराक़ की सड़कों पर जनता ने किया विशाल प्रदर्शन

दुश्मन को अपने उद्देश्य मे आंशिक सफलता भी मिल गयी थी जब ईरान के वाणिज्य दूतावास और शहीद बाक़िर अल हकीम के मज़ार को उपद्रवियों ने आग लगा दी...
post-image
Marquee Muslim World Slider Special Report World

नाइजीरिया | शैख़ इब्राहीम ज़कज़की और उनकी पत्नी को कादूना सेन्ट्रल भेजा गया

नाइजीरिया की अदालत देश के इस्लामी आंदोलन के नेता और उनकी पत्नी को कादूना सेन्ट्रल जेल भेजने की मंज़ूरी दे दी है। कादूना राज्य के उच्च न्यायालय ने इस्लामी...
post-image
Marquee Slider Special Report World

सोमालिया: 18 भारतीयों सहित हांगकांग के पानी के जहाज को समुद्री लुटेरों ने किया अगवा

बोनी (सोमालिया). सोमालिया (Somalia) के पास अदन की खाड़ी से 18 भारतीयों सहित 22 यात्रियों वाले एक पानी के जहाज को समुद्री लुटेरों (pirates) ने बंधक बना लिया. पूर्वी...
Load More
ads